نعت نبیﷺ کوئے نبی کا در ہو کہ دیوار ، خوب ہے

نعت نبیﷺکوئے نبی کا در ہو کہ دیوار  خوب ہے

Table of Contents

نعت نبیﷺ

از قلم: مشاہد رضا قادری

نعت نبیﷺ کوئے نبی کا در ہو کہ دیوار ، خوب ہے
نعت نبیﷺ کوئے نبی کا در ہو کہ دیوار ، خوب ہے

کوئے نبی کا در ہو کہ دیوار  خوب ہے
گنبد، سنہری جالی وہ مینار خوب ہے

ان کے حرم کی بات پہ صد بار واہ واہ!
گل تو ہے گل وہاں کا ہر اک خار خوب ہے

یا رب اسے عطا ہوں اب انعام وصل کے
یہ دل فراق یار میں بیزار خوب ہے

خوبی بیاں کروں تومیں کیاکیابیاں کروں
حق یہ، ہر ایک عادت سرکار خوب ہے

"اَصْحَابِيْ كَالنُّجُومْ” کے مصداق ہیں سبھی
اصحاب میں مگر وہ صفِ چارخوب ہے

پرکیف ہے وہ چاند کا شق ہونا اسطرح
لکڑی بنی ہے دیکھیئے تلوار خوب ہے

دونوں جہاں کا سہرا سجا ہے انھیں کے سر
مَا كَان و مَا یَكُون کی دستار خوب ہے

لکھتا ہوں بار بار اس امید پر میں نعت
سرکارکہہ دیں مجھکو، ہاں اس بار خوب ہے

اشعار میرے، میری غلامی کی ہیں دلیل
ان میں مشاہد عشق کا اظہار خوب ہے

از قلم: مشاہد رضا قادری فیض آباد

تمھارا عارضِ پر نور قرآں یا رسول اللّٰه

منقبت در شانِ تاج الشریعہ علیہ الرحمہ

نعت شریف،جو لب پر مرے یا نبی یانبی ہے

نعت،تیرے جمال نے حیرت میں ڈال رکھا ہے

کرتے رہیں حضور کی مدحت ہزاربار

نہ پوچھ مجھ کو ملا کیا سے کیا مدینے سے

Like this article?

Share on Facebook
Share on Twitter
Share on Whatsapp
Share on E-mail
Share on Linkedin
Print (create PDF)

Leave a comment