تمھارا عارضِ پر نور قرآں یا رسول اللّٰه

تمھارا عارضِ پر نور قرآں یا رسول اللّٰه

Table of Contents

تمھارا عارضِ پر نور قرآں یا رسول اللّٰه

از قلم: محمد قاسم مصباحی ادروی

https://aapkaqalam.com/tumhara-aride-pu…-ya-rasool-allah/

گلِ باغ نبوت ، جانِ ایماں یا رسول اللہ

حریمِ قدس کے شمعِ شبستاں یا رسول اللّٰه

ہیں محرابِ حرم ابرو، تو رحمت کی گھٹا گیسو
تمھارا عارضِ پُر نور قرآں یارسول اللّٰه

شبِ معراج کے دولھا، امینِ سِرِّ ما أوحٰى
تمھی خلاقِ عالم کے ہو مہماں یا رسول اللّٰه

مکین لامکاں تم ہو خدا کے رازداں تم ہو
تمھی ہو تاجدار بزمِ امکاں یا رسول اللّٰه

اگر ہوتے نہ تم یہ گلشنِ ہستی نہیں ہوتا
ہوتم روح چمن جان بہاراں یا رسول اللّٰه

تمھارے نور سے روشن جماعت انبیا کی ہے
ہیں وہ تارے تو تم مہر درخشاں یا رسول اللّٰه

میں کیسے چاند سے تشبیہ دوں روۓ منور کی
کف پا پر فدا ہے ماہ تاباں یا رسول اللّٰه

کوئی تم سا حسیں آۓ یہ ناممکن ہے ناممکن
تمھارے حسن پر خود حسن قرباں یا رسول اللّٰه

ہو تم گُلبُن، کلی ہے فاطمہ، حسنین گل، شاخیں
ابو بکر و عمر، کرار و عثماں یا رسول اللّٰه

قمر کو شق کیا ڈوبے ہوئے سورج کو لوٹایا
بنایا شاخ کو شمشیرِ بُرّاں یا رسول اللّٰه

ہمارے سوکھے دھانوں پر بھی اک نظرِکرم کردو
برس جائے ادھر بھی ابر نیساں یا رسول اللّٰه

تمھاری بارش رحمت کے چھینٹے ہم بدوں پر بھی
کہ دھل جائیں ہمارے داغ عصیاں یا اللّٰه

زہے قسمت کرم فرما کے گر تشریف فرما ہوں
مری کٹیا بھی ہو جنت بداماں یا رسول اللّٰه

مدد فرمائیے مشکل یہاں پر ہو گیا جینا
پریشاں ہیں بہت ہندی مسلماں یا رسول اللّٰه

کبھی یہ دھمکیاں دیتے ہیں تم ہندوستاں چھوڑو
ہمیں کرتے ہیں یہ ظالم ہراساں یا رسول اللّٰه

کہیں درگاہ پر حملے، کہیں ہیں مدرسے زد پر
کہیں پر مسجدیں کرتے ہیں ویراں یا رسول اللّٰه

کہیں پر گھر اجڑتے ہیں، کہیں ہم قتل ہوتے ہیں
ہمارا خوں ہو اب کیا اس سے ارزاں یا رسول اللّٰه

تلے ہیں قوم مسلم کو مٹانے پر یہاں ظالم
خبر لیجے طفیلِ شیرِ یزداں یا رسول اللّٰه

سنائیں داستان کس کو، کریں فریاد تو کس سے
ہمارا ہے نہیں کوئی بھی پُرساں یا رسول اللّٰه

ہمیشہ کے لیے قاسم کو اذن حاضری دے دیں
کرم اتنا ہو اس پر جانِ جاناں یا رسول اللّٰه

تمھارا عارضِ پر نور قرآں یا رسول اللّٰه

از قلم: محمد قاسم مصباحی ادروی

Like this article?

Share on Facebook
Share on Twitter
Share on Whatsapp
Share on E-mail
Share on Linkedin
Print (create PDF)

Leave a comment