نعتِ رسول ﷺنعتِ حضور کا ہے یہ فیضان وغیرہ

نعتِ رسول ﷺنعتِ حضور کا ہے یہ فیضان وغیرہ

Table of Contents

نعتِ رسول ﷺنعتِ حضور کا ہے یہ فیضان وغیرہ

نعتِ رسول ﷺنعتِ حضور کا ہے یہ فیضان وغیرہ
نعتِ رسول ﷺنعتِ حضور کا ہے یہ فیضان وغیرہ

 

نعتِ حضور کا ہے یہ فیضان وغیرہ
میری جو ہرسو ہو گئی پہچان وغیرہ

تاثیرِ لعابِ فمِ سرکار کے آگے
سر اپنا جھکا دیتے ہیں لقمان وغیرہ

اک نعت سے جو پا لیا بو صیری! آپ نے
وہ پا سکے نہ صاحبِ دیوان وغیرہ

نوکر جو اپنے در کا بنا لیں شہِ عرب
"پھر کیا ہے میرے سامنے سلطان وغیرہ”

عشقِ نبی کا شمع فروزاں ہے ڈر نہیں
رستے ہمارے گر چہ ہوں سنسان وغیرہ

شہرِ نبی کے خار کے آگے بتا بھلا
کیا حیثیت ہے تیری گلستان وغیرہ

جائیں گے خلد پا کے شفاعت حضور کی
جتنے بھی ہیں یہاں پہ ثنا خوان وغیرہ

انگشتِ مصطفیٰ سے جگر مہ کا شق ہو جب
پھر کیا ہیں ان کے آگے پہلوان وغیرہ

جڑ سے اکھڑ کے آج بھی آجائے گا شجر
سرکار کا ہو جائے جو فرمان وغیرہ

جس نے کہا حضور کو اپنی طرح بشر
برباد اس کا ہو گیا ایمان وغیرہ

ارشاد کیجیے مرے سرکار مال کیا
قربان کر دوں آپ پہ یہ جان وغیرہ

ان کا کرم نہ ہو اگر اک شعر بھی نہ ہو
شؔاکر بہت بعید ہے دیوان وغیرہ

نتیجۂ فکر؛ شاکر رضا نوری الہ آبادی

مزید پڑھیں

نعت شریف،جو لب پر مرے یا نبی یانبی ہے

نعت،تیرے جمال نے حیرت میں ڈال رکھا ہے

کرتے رہیں حضور کی مدحت ہزاربار

نہ پوچھ مجھ کو ملا کیا سے کیا مدینے سے

نعت نبیﷺکوئے نبی کا در ہو کہ دیوار  خوب ہے

Like this article?

Share on Facebook
Share on Twitter
Share on Whatsapp
Share on E-mail
Share on Linkedin
Print (create PDF)

Leave a comment