منقبت سلطان الہند رضی اللہ تعالیٰ عنہ

منقبت سلطان الہند رضی اللہ تعالیٰ عنہ

Table of Contents

منقبت سلطان الہند رضی اللہ تعالیٰ عنہ

قلب میں میرے ابھی ہجر کی تازہ تھی چبھن
دیکھ کر چیخ پڑے اُس کو جوانانِ چمن

تھپکیاں دے کے سلاتی ہے تری یاد مجھے
مجھ کو تنہائی میں محسوس جو ہوتی ہے گُھٹن

کب تلک یوں ہی رہیں منتظرِ فردا ہم
ہم پہ کھل جائیں کسی روز تو اسرارِ سخن

آمدِ بادشہِ چشت سے جب صُبح ہوئی
تب مسرّت میں ہوئی رقص کُناں ارضِ وطن

کیوں نہ ہو قابلِ تعظیم ترا نام و نسب
تیری رَگ رَگ میں سَرایت ہوا جب خونِ حسن

چشتیہ باغ میں مہکیں ہیں وہی پھول جنھیں
رشک صد بار کریں دیکھ کے گُلہائے عدن

پرکشش کوچۂ خواجہ کی ہے زیب و زینت
خطۂ ہند پہ دیکھی نہ کہیں ایسی پَھبن

اکبر و شاہجہاں کی کوئی تخصیص نہیں
سر بخم ہیں اسی چوکھٹ پہ سلاطینِ زمن

نکہتِ کاکلِ جاناں کو اگر سُونگھ لیں لوگ
نظر انداز کریں خُوشبوے آہوئے خُتن

کاش گردن میں رہے طَوقِ غلامی تیرا
تیری توصیف میں ہوں "وا” مری نسلوں کے دہن

یا الہی! مری تربت میں بھی ہوں مُوئے نبی ﷺ
چادرِ خواجۂ اجمیر بنے میرا کفن

منبعِ نور ہے سنگِ درِ خواجہ خاکٓی
ماند ہیں اس کے مُقابل میں سبھی لعلِ یمن

از : شمس تبریز خاکٓی ظہوری مرکزی
خانقاہ ظہوریہ چشتیہ قادریہ{بلگرام شریف}
رابطہ نمبر : 8791336136

اے ہند کے والی

قبلۂ عارفاں خواجۂ خواجگاں

ہند کے بادشاہ خواجۂ خواجگاں

Like this article?

Share on Facebook
Share on Twitter
Share on Whatsapp
Share on E-mail
Share on Linkedin
Print (create PDF)

Leave a comment