اے ہند کے راجہ

اے ہند کے راجہ

Table of Contents

اے ہند کے راجہ

صنعتِ مستزاد میں،منقبت در شانِ سلطان الہند،عطائے رسول حضرت خواجہ معین الدین چشتی سنجری ثم اجمیری رضی اللہ تعالیٰ عنہ

اس دل کی خلش اور بڑھا دے مرے خواجہ،اے ہند کے راجہ
اس دردِ محبت کا مزا دے مرے خواجہ،اے ہند کے راجہ

گھنگھور سیہ رات نہ گزرے گی یہ ایسے،بتلاؤں میں کیسے
چہرے سے نقاب اپنے ہٹا دے مرے خواجہ،اے ہند کے راجہ

بیمار شفا پاتے ہیں دربار میں تیرے،بازار میں تیرے
اس قلبِ حزیں کو بھی شفا دے مرے خواجہ، اے ہند کے راجہ

جس جام کو پی کر مرے کاکی ہوئے مدہوش،آئے نہ مجھے ہوش
وہ جام مجھے بھی تو پلا دے مرے خواجہ،اے ہند کے راجہ

میں بند کروں آنکھیں نظر آئے ترا گھر،پیارا سا ترا در
آنکھوں کو مری ایسی ضیا دے مرے خواجہ،اے ہند کے راجہ

چشمانِ کرم دشتِ سخن پر مرے داتا،اجمیر کے مولی
تازہ سا گلِ نعت کھلا دے مرے خواجہ،اے ہند کے راجہ

کس در پہ بیاں اپنا کروں دل کا فسانہ،اے شاہِ زمانہ
تو ہی مرا ہر کام بنا دے مرے خواجہ،اے ہند کے راجہ

وہ رنگ جو انمول ہے حد درجہ حسیں ہے،سیرت کا نگیں ہے
وہ رنگ تو خاکی پہ چڑھا دے مرے خواجہ،اے ہند کے راجہ

از قلم: شمس تبریز خاکٓی ظہوری مرکزی
خانقاہ ظہوریہ چشتیہ قادریہ (بلگرام شریف)
رابطہ نمبر: 8630830445


منقبت سلطان الہند رضی اللہ تعالیٰ عنہ

اے ہند کے والی

قبلۂ عارفاں خواجۂ خواجگاں

Like this article?

Share on Facebook
Share on Twitter
Share on Whatsapp
Share on E-mail
Share on Linkedin
Print (create PDF)

Leave a comment