سلام اے قلعۂ حکمت کے بانی حافظ ملت

سلام اے قلعۂ حکمت کے بانی حافظ ملت

Table of Contents

سلام اے قلعۂ حکمت کے بانی حافظ ملت

واصف رضا واصف

درخشندہ ہے تیری زندگانی حافظ ملت
نظر آتا نہیں ہے تیرا ثانی حافظ ملت

تری باتیں نصیحت اورحکمت کاحسیں سنگم
ترا طرہ رہا ہے حق بیانی حافظ ملت

وہ چمکا ہے زمانے میں مثال ماہ دوہفتہ
ہوٸی جس پربھی تیری مہربانی حافظ ملت

ہیں تیرے کارنامے لاٸق ترقیم ِ آبِ زر
سلام اے قلعۂ حکمت کے بانی حافظ ملت

تری ذات ِ جفا کش نے زمین اشرفیہ پر
چھڑایا خوب رنگ ِ آسمانی حافظ ملت

سدا کاسہ بکف شاہ و گدا آتے ہیں روضے پر
کہ ہےتیری عطا میں وہ روانی حافظ ملت

ہمہ دم ہے حصار چشم الطاف و عنایت میں
بھلا کیسے مٹے تیری *نشانی* حافظ ملت

ترے در کا ترفع کج کلاہِ دہر کیا سمجھے
کہ تیرا در ہے علمی راجدھانی حافظ ملت

صمیمِ قلب سے تیرا کہا تسلیم کرتے ہیں
ہے اہل دل پہ تیری حکمرانی حافظ ملت

جہاں میں مسلکِ احمد رضا کی آپ نے کی ہے
بفضل اللہ عمدہ ترجمانی حافظ ملت

گلستانِ عزیمت میں اداسی چھاگٸی واصف
گۓ جب چھوڑ کر دنیاے فانی حافظ ملت

عقیدت کیش
واصف رضاواصف مدھوبنی بہار

مزید پڑھیں

اشرفیہ میں بہار و تازگی عبدالعزیز

مہ اقبال تیرا نور افزا حافظ ملت

مثال ماہ تاباں ہے جوار حافظ ملت

Like this article?

Share on Facebook
Share on Twitter
Share on Whatsapp
Share on E-mail
Share on Linkedin
Print (create PDF)

Leave a comment