اشرفیہ میں بہار و تازگی عبدالعزیز

اشرفیہ میں بہار و تازگی عبدالعزیز

Table of Contents

اشرفیہ میں بہار و تازگی عبدالعزیز

از: واصف رضا واصف

جس نے رکھی آپ سے وابستگی عبدالعزیز
اس کوحاصل ہےجہاں میں ہرخوشی عبدالعزیز

آپ کےکردار میں ہے سیرت شہ کی چمک
صاف وششتہ ہے زجاج زندگی عبدالعزیز

پاے استقلال میں لغزش نہیں آٸی کبھی
ایسے ہیں مرد خدا مرد جری عبدالعزیز

آج بھی ہوتا ہے ہرسو آپ کا ذکرجمیل
وہ بلندی رب کی جانب سے ملی عبدالعزیز

ہیں تن تنہا یقینا آپ رشک انجمن
آپ کی مشہور ہے دانشوری عبدالعزیز

آپ کےفیضان سے قاٸم رہے گی حشرتک
اشرفیہ میں بہار و تازگی عبدالعزیز

آپ کے ہاتھوں ملا جب سےشراب معرفت
رندپرچھاٸی ہوٸی ہے بےخودی عبدالعزیز

مژدہ ٕاذن در پرنور کر دیجے عطا
تاکہ ہوواصف رضاکی حاضری عبدالعزیز

عقیدت کیش

واصف رضاواصف مدھوبنی بہار

مزید پڑھیں

مہ اقبال تیرا نور افزا حافظ ملت

مثال ماہ تاباں ہے جوار حافظ ملت

پرچم ترے اذکار کے لہراٸیں ابوالفیض

حق گوٸی رہی آپ کی پہچان ابوالفیض

اے رہبر دیں قوم کے معمار ابوالفیض

Like this article?

Share on Facebook
Share on Twitter
Share on Whatsapp
Share on E-mail
Share on Linkedin
Print (create PDF)

Leave a comment