اے مرد حق اے مرد باوفا عمار بن یاسر

اے مرد حق اے مرد باوفا عمار بن یاسر

Table of Contents

اے مرد حق اے مرد باوفا عمار بن یاسر

واصف رضا واصف

اسیر گیسوے شاہ دنی عمار بن یاسر
تشرف کے ہیں در بے بہا عمار بن یاسر

تمھماری زندگی زہد و تورع سے معنون تھی
تمھیں ہردم رہا خوف خدا عماربن یاسر

شکشت فاش دی ہے تم نے شیطان لعیں کوبھی
اے مرد حق اے مرد باوفا عمار بن یاسر

فروغ دین محبوب خداے پاک میں تم نے
مصاٸب کا کیا ہے سامنا عماربن یاسر

نہایت نرم خو ،کم گو ،خلوص وعجز کے پیکر
ہیں نور شمع بزم اتقیا عمار بن یاسر

ہراک لمحہ غریب و بےکس ومجبورکی خاطر
رواں ہے آپ کا بحر سخا عمار بن یاسر

زجاج عادات و اطوار ہے شفاف ونور افشاں
ہراک پہلو سے ہیں بیشک جدا عماربن یاسر

براے دشمنان صاحب شق القمر واصف
خدا کے قہر کی اک صاعقہ عمار بن یاسر

رشحات قلم
واصف رضاواصف مدھوبنی بہار

مزید پڑھیں

ابھی بھی دشمنوں پرخوف ہےطاری قتادہ کا

تمھاری ہی تو ہے چشم عنایت حافظ ملت

اشرفیہ میں بہار و تازگی عبدالعزیز

Like this article?

Share on Facebook
Share on Twitter
Share on Whatsapp
Share on E-mail
Share on Linkedin
Print (create PDF)

Leave a comment