Islamic Articles, Naat, Manqabat etc

Read Here For Free


وہ حسین ابن علی حیدر کرار ہی ہے

وہ حسین ابن علی حیدر کرار ہی ہے

محمد جسیم اکرم مرکزی

بادۂ عشق نبی ہم کو پلایا جس نے

دین اسلام پہ مر مٹنا سکھایا جس نے

پرچم حق کو بلندی پہ اٹھایا جس نے

وعدۂ احمدِ مختار نبھایا جس نے

          وہ حسین ابن علی حیدر کرار ہی ہے

          یعنی وہ جلوہ گہِ بوسۂِ سرکار ہی ہے

اپنے کنبے کو شریعت پہ لٹایا جس نے

دین احمد کو لہو دے کے بچایا جس نے

ضرب شمشیر و سناں سینے پہ کھایا جس نے

غلبۂ دیں کے لیے خون بہایا جس نے

          وہ حسین اب علی حیدر کرار ہی ہے

          یعنی وہ جلوہ گہِ بوسۂِ سرکار ہی ہے

جو ولی ابن ولی اور شہید ابن شہید

فاطمہ بنت پیمبر کا ہے جو لعل رشید

جس کی تطہیر پہ شاہد ہے کلام توحید

جس سے خائف ہے زمانے کا ہر اک شمر و یزید

          وہ حسین ابن علی حیدر کرار ہی ہے

          یعنی وہ جلوہ گہِ بوسۂِ سرکار ہی ہے

گردنِ ظلم پہ اک آخری شمشیر ہے جو

رب کی آیات کی چلتی ہوئی تفسیر ہے جو

کربلا پاک میں بھی سجدۂ توقیر ہے جو

وادی کرب میں ایوب کی تصویر ہے جو

           وہ حسین ابن علی حیدر کرار ہی ہے

           یعنی وہ جلوہ گہِ بوسۂِ سرکار ہی ہے

جس کے حلقوم میں جانے کو ہے ترسا پانی

جس کو حسرت کی نگاہوں سے ہے دیکھا پانی

جس کی آہوں میں ہے خود پھوٹ کے رویا پانی

ہر طرف جس کے لیے اب بھی ہے بہتا پانی

        وہ حسین ابن علی حیدر کرار ہی ہے

        یعنی وہ جلوہ گہِ بوسۂِ سرکار ہی ہے

آتش ظلم سے جو کنبے کو جلتے دیکھا

جس نے قاسم کی جوانی کو مچلتے دیکھا

جان اصغر کو تہِ تیر نکلتے دیکھا

جس نے عباس کو گھوڑے سے پھسلتے دیکھا

        وہ حسین ابن علی حیدر کرار ہی ہے

         یعنی وہ جلوہ گہِ بوسۂِ سرکار ہی ہے

راکب دوش نبی مرکز انوار ہے جو

نازش آل علی سید اخیار ہے جو

منبع جود و سخا حاکم و سردار ہے جو

مخزن صبر و رضا دین پہ سرشار ہے جو

         وہ حسین ابن علی حیدر کرار ہی ہے

         یعنی وہ جلوہ گہِ بوسۂِ سرکار ہی ہے

دیکھ کر چہرۂ پر نور صحابہ نے کہا

اس میں آتا ہے نظر جلوۂ شاہ بطحا

آیا ہے جس کے لیے باغ جناں سے جوڑا

جس کی ناراضگی ناراضگیِ نور خدا

          وہ حسین ابن علی حیدر کرار ہی ہے

            یعنی وہ جلوہ گہِ بوسۂِ سرکار ہی ہے

اپنے شانے پہ شہ دیں نے بٹھایا جس کو

رب کے قرآن کی تفسیر سکھایا جس کو

سارے اسرار شریعت کے بتایا جس کو

فرش سے عرش تلک سارا دکھایا جس کو

          وہ حسین ابن علی حیدر کرار ہی ہے

          یعنی وہ جلوہ گہِ بوسۂِ سرکار ہی ہے

آخری دم بھی قضا سجدہ جو ہونے نہ دیا

دست ظالم پہ جو بیعت کا نہ سمجھوتا کیا

کربلا میں جو شہادت کا عجب جام پیا

ہے جسیمِ رضَوی جو قمَرِ "بل احیا”

          وہ حسین ابن علی حیدر کرار ہی ہے

          یعنی وہ جلوہ گہِ بوسۂِ سرکار ہی ہے

محمد جسیم اکرم مرکزی

مزید پڑھیں

شان عالی ہےمرے صدرشریعت تیری
قلزم تقوی کے اک نایاب گوہر ، یارغار
آج تشریف تصور میں ہیں لاے صدیق

Spread The Love

Leave a Comment

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Related Posts