منقبتِ حسین

منقبتِ حسین،قبلہ ٔ عشاق ہے لاریب دربار حسین

Table of Contents

منقبتِ حسین،قبلہ ٔ عشاق ہے لاریب دربار حسین

از: واصف رضاواصف

منقبتِ حسین
منقبتِ حسین

چرخ کی رفعت کو شرماتا ہے مینار حسین
قبلہ ٔ عشاق ہے لاریب دربار حسین

ہے عبارت صبرو استقلال سے ان کی حیات
حیطۂ ادراک سے برتر ہے کردار حسین

زم زم لطفِ شہِ بطحا سے وہ سینچا گیا
ہے خزاؤں کی پہنچ سے دور گلزار حسین

کرّوفر نازو نعم میں رہتے ہیں عشاق سب
قعر ذلت میں پڑا رہتا ہے غدار ِحسین

جام ِ الفت نوش فرماکر نگاہ ناز سے
مستیوں میں ہرگھڑی رہتاہے میخوار ِحسین

ان کےقول وفعل میں ہےشاہ بطحا کی جھلک
"یعنی گفتار حبیب رب ہے گفتار حسین”

خود طبیب وقت کی واصف !وہ کرتاہےعلاج
حامل ِ وصف ِ جداگانہ ہے بیمار حسین

رشحات قلم
واصف رضاواصف مدھوبنی بہار

مزید پڑھیں

در مدح سید المحدثین سیدناابوہریرہ ؓؓ

درمدح سیدناحسان بن ثابتؓ

در مدح سید المحدثین سیدناابوہریرہ ؓ

در مدح بلال حبشیؓ

درمدح صحابی رسول ،حضرت ابوعبیدہ بن جراح ؓ

در مدح صحابی رسول ﷺ حضرت ابودجانہؓ

در مدح حضرت عبداللہ بن عمرؓ

Like this article?

Share on Facebook
Share on Twitter
Share on Whatsapp
Share on E-mail
Share on Linkedin
Print (create PDF)

Leave a comment