Islamic Articles, Naat, Manqabat etc

Read Here For Free


حضور مفتی اعظم،شریعت اور تعظیمِ نسبت

حضور مفتی اعظم،شریعت اور تعظیمِ نسبت

حضور مفتی اعظم،شریعت اور تعظیمِ نسبت

ابوضیاءغلام رسول مِہ٘ر٘سعدی

 

ولایت و بزرگی کی پہچان یہ بھی ہے کہ آدمی شریعت مطہرہ کا پابند ہو،آداب شریعت کو ملحوظ اور ان کے خلاف سے محفوظ رہے جو قرآن و حدیث کے موافق ہو اسے کلیجہ سے لگائے اور اس کے خلاف سے دور بھاگے ۔
حضور مفتی اعظم نائب رسول اعظم ہم شبیہ غوث اعظم سیدنا سرکار مصطفیٰ رضا خان علیہ الرحمہ والرضوان تاجدار اہلسنت شہزادہ اعلیٰ حضرت فاضل بریلوی کی سیرت وسوانح پڑھنے کے بعد معلوم ہوتا ہے کہ آپ کی پوری زندگی شریعت کی پابندی اور رسول اکرم صلی وسلم کی اتباع وپیروی میں گزری ہے ۔ وہ بھی اس شان سے کسی کو یہ معلوم کرنا ہو یہ مسئلہ شریعت میں جائز ہےکہ ناجائز یا اس سلسلے میں سرکار علیہ السلام کی سنت کیا رہی ہے تو آپ کے سامنے پہنچ کر آپ کے عمل کو دیکھ لیتا اور یہ فیصلہ کر لیتا کہ یہی سرکار دو عالم صلی اللہ علیہ وسلم کی سنت ہے ۔گویا آپ محمد عربی صلی اللہ علیہ وسلم کی سنت کی چلتی پھرتی تصویر تھے۔
اس موقع پر *حضور شیخ الاسلام والمسلمین حضرت علامہ مفتی سید محمد مدنی میاں دام ظلہ کچھوچھوی* نے بڑی پیاری بات ارشادفرمائی ہے۔ الفاظ کی شِیرنی سے چاشنی حاصل کرنے کے لئے انہیں کی زبانی سنئے:۔
”بخاری و مسلم کا سننے والا جس یقین و اذعان کے ساتھ کہہ سکتا ہے کہ ہم نے رسول کریم صلی وسلم کے اقوال سنے اس یقین اذعان کے ساتھ حضور مفتی اعظم ہند کے دیکھنے والے کو یہ حق ہے کہ کہے ہم نے رسول کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی (سنت) کی چلتی پھرتی تصویر دیکھی۔
فرائض وواجبات و موکدات کو رہنے دیجئے جو ہستی مباحات و فطری خواہشات میں بھی رسول کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی اطاعت و اتباع سے سرمو متجاوز نہ ہو وہ رسول کریم صلی وسلم کی سچی تصویر اور افعال رسول کی حفاظت کا پیکر نور نہیں تو اور کیا ہے؟ "(مفتی اعظم کی استقامت وکرامت ص٦٢)
کروڑوں سلام ہو اس ذات والا صفات کے مرقد انور پر جو سراپا سنت رسول واطاعت فرمان نبی ﷺ کی چلتی پھرتی تصویر تھی۔

جن کی ہر ہر ادا سنت مصطفی

ان کی نورانی تربت پہ لاکھوں سلام

اشرف وآسی،حشمت،رضا،مصطفی

پنج گنج ولایت پہ لاکھوں سلام

*حضورمفتی اعظمِ عالم،مخدوم اہلسنت* حضرت
علامہ مولانامصطفی رضا خان علیہ الرحمۃ والرضوان کی اتباع شریعت، وکرامت وبزرگی اور احترام آثار و منسوباتِ رسول اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی شہرت ودھمک دور دور تک تھی۔ حیدرآباد کے مسلمانوں کے تاثرات اور انہیں لوگوں کی زبانی مفتی اعظم کے لا مثال احترام سادات کا نمونہ یہاں ہدیہ ناظرین ہے جس کا حاصل یہ ہے کہ مسجد حیدرآباد میں مشتاقان دید مفتی اعظم کے ضیاء بار چہرۂ انوراور جلوۂ غوث اعظم کا دلکش نظارہ اپنے سر کی آنکھوں سے کرنا چاہتے ہیں۔ مگر مفتی اعظم اپنے رب کے ذکر وفکرمیں مشغول ہو کر بیٹھے ہوئے ہیں۔
سادات حیدرآبادنے لوگوں کے جذبات کو دیکھ کر گزارش کی”حضور! آپ منبرپرتشریف رکھیں تاکہ فدائیوں کو جلوے جہاں آرا کی زیارت نصیب ہو،۔،،لیکن مفتی اعظم نے یہ کہ کرمنبرپربیٹھنےسےانکارکردیاکہ ” رسول کریم کی آل نیچے ہو اور میں اوپر بیٹھو یہ مجھ سے کبھی نہیں ہوسکتا۔،،
  *حضور شیخ اعظم شہزادہ حضورسرکارکلاں حضرت علامہ مفتی سید محمد اظہار اشرف اشرفی جیلانی علیہ الرحمہ کچھوچھہ مقدسہ* اپنے ایک مقالہ” مفتی اعظم اور محبت رسول،،میں رقمطرازہیں” جب میں حیدرآبادپہنچاتواس عاشق رسول (یعنی حضورمفتی اعظم ہند)کے بے شمارچاہنے والوں سے ملاقات ہوئی۔آپ کی مدح و ثنا میں سب ہی رطب اللسان نظر آئے۔کوئی تقوی وطہارت کو موضوعِ سخن بنائے ہوئے تھا۔ کوئی اتباع سنت سے متاثر نظر آرہا تھا اور کسی کو آپ کے سادات کے بےپناہ احترام نے گرویدہ بنا رکھا تھا۔ایک ثقہ روایت کے مطابق مکہ مسجد کاعظیم الشان اجلاس جس میں کم وبیش ساٹھ ہزارمسلمانوں کا اجتماع اور پھر سب کے دل میں حضور مفتی اعظم ہند کی زیارت کی تمنا اور اس پر سادات حیدر آباد کا مفتی اعظم ہند سے گزارش کرناکہ منبر پریا کم ازکم کرسی پر رونق افروز ہوں تاکہ دیدار کا اشتیاق رکھنے والوں کی تمنا پوری ہوجائے۔یہ وہ مناظر ہیں جنہیں فراموش نہیں کیا جاسکتا۔مگر ان مناظرسےزیادہ فراموش کرنے والا وہ جواب ہےجوآل رسول کا احترام کرنے والے نے دیا،حضور مفتی اعظم ہند نے فرمایا:”رسول کریم ﷺ کی آل نیچے ہو اور میں اوپر بیٹھوں یہ مجھ سے کبھی نہیں ہوسکتا،،امرپرادب کوترجیح دے کر حضور مفتی اعظم ہند نے صدیق اکبر اور مولائے کائنات کے پاکیزہ جذبات کی یاد دلا دی۔حیدرآبادی حیران وششدررہ گئے اور خود ان کے دلوں میں اس عشق کےانواروبرکات ہونے لگا اور پھر پورا مجمع نام عشق مصطفیٰ میں سرشار نظر آنے لگا۔۔۔بالآخر۔۔۔۔اپنے آقازادوں کے اصرار پرصرف اتنا ہی کھڑے ہوگئے،جس جس نے اس مینارۂ نور کو دیکھا اس کا اپنے دین و مذہب کی سچائی کا یقین اور تابناک ہو گیا کہ یہ چہرہ جھوٹوں کا چہرہ نہیں ہو سکتا۔،،(مفتی اعظم ہند نمبر ص١٢٦)
  *یہ ہےحضور مفتی اعظم ہند علیہ الرحمہ کا نسبت رسول سےپاس ولحاظ* جو مقصد شریعت کے عین مطابق ہے۔

شرع شریف کا یہ حکم بھی ہے کہ نبی کریم ﷺ سےہر منسوب شئی کی تعظیم ضروری ہے۔ یہی وجہ ہے کہ آپ کے خانوادے کے افراد یعنی سیدوں کی تعظیم وتکریم واجب ہے۔ فقہ کی کتب معتبرہ میں ہے۔ "تَع٘ظِیمُ السیِّدِواجبٌ ولوکاَنَ فاسقاً،، (سیدوں کی تعظیم وضروری ہے اگرچہ فاسق ہی کیوں نہ ہو۔) اور یہ ناقابل انکار حقیقت ہے کہ جو راہ سلامتی اور استقامت چاہتا ہے اسے قرآن مجید کے ساتھ ساتھ نسبت رسول کابھی پاس رکھنا ہوگا۔ فرمان رسالت ہے” یَاَیُّھاَ النَّاسُ اِنِّی٘ تَرَکْتُ فی کُمُ الثَّقَلَینِ مَااِن٘ اَخَذ٘تُم لَن٘ تضِلُّواکتابَ اللّٰہِ وعِت٘رَتِی اَہ٘لَ بَی٘تِی٘،، اے لوگو! میں تمہارے درمیان دوبھاری اور اہم چیزیں چھوڑےجارہاہوں، جب تک تم لوگ ان دونوں کو تھامےرہوگےہرگزہرگزگمراہ نہ ہو گے۔ ان میں سے پہلی چیز کتاب اللہ  اور دوسری میری اولاد،اہل بیت اطہارہیں۔(مشکوۃ ص٥٦٩)
حضور مفتی اعظم ہند علیہ الرحمہ اور آپ کے والد گرامی امام عشق ومحبت سیدنا اعلیٰ حضرت امام احمد رضا خان علیہ الرحمہ زندگی کےآخری لمحہ تک اس پر کاربند رہے اور کسی بھی سید کی تعظیم میں کسرنہ اٹھارکھی۔
اپنے محبوب تاجدار کائنات ﷺکی رضا وخوشنودی کے لئے ہر اس کی توقیر بجالائی جس کواس جان جاناں سے نسبت وتعلق تھا جس کی سینکڑوں مثالیں اوراق تاریخ پر ثبت ہیں۔
الله تبارک وتعالیٰ اپنے حبیب مکرم ﷺ کے صدقے حضور مفتی اعظمِ عالم حضرت علامہ مولانا مصطفیٰ رضا خان علیہ الرحمہ والرضوان کے فیضان سے ہمیں مالامال فرمائے اورایمان کی سلامتی کے ساتھ دارین کی سرخروئی نصیب فرمائے۔ آمین بجاہ اشرف الانبیاء والمرسلین ﷺ

  فقط:طالب مدینہ،گدائے اعلیٰ حضرت اسیر شیخ اعظم:
  فقیر ابوضیاءغلام رسول مِہ٘ر٘سعدی آسوی، قادری چشتی رضوی اشرفی برکاتی(خلیفہ مشائخ بریلی وکچھوچھہ)
بانی:شیخ شیر محمد اکیڈمی،
   بوہر، تیلتا،کٹیہار، بہار۔
  مقیم بلگام کرناٹک انڈیا8618303831
  مورخہ ١٤/محرم الحرام ١٤٤٤ھ بمطابق ١٣اگست٢٠٢٢ءبروزسنیچر

مذید پڑھیں

مختصر سوانح حیات تاجدار اہل سنت مفتی اعظم ہند علیہ الرحمہ

امام عالی مقام مختصر سیرت و کردار

محرم الحرام خرافات رسومات واصلاح

Spread The Love

Leave a Comment

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Related Posts